پاک کی ناپاکیاں

لوگوں پر غم کے بادل چھائے ہوئے ہیں۔ہر طرف فضاء افسردہ افسردہ سی ہے۔کاروباری زندگی کی رونق بالکل ماند ہے ۔دوکانیں مارکیٹیں بند پڑی ہیں ،اور لوگ مختلف ہُجروں میں اور بیٹکوں میں بیٹھ کر افسوس کر رہے ہیں،اور ساتھ ہی بے اعتباری کا اظہار بھی کر رہے ہیں ۔

انکو یقین نہیں آرہا کہ جن کے ساتھ  ہم وفاداری نبھاتے ہیں اور  جن کے ساتھ کئے گئے وعدے کا waziristan aman dealپاس رکھتے ہیں اور  تو  اور  جوانکے ساتھ برے سلوک سے پیش آتے ہیں ،انکو بھی اس کام سے روکتے ہیں۔

آج انکے جانب سے وعدہ خلافی کی جائے گی،اور اس پر بھی ڈھٹائی  اور بے شرمی کا مظاہرہ کیا  جائے گا!!!۔

وطن سے کس کو پیار نہیں لیکن اہل وطن کے طرف سے ایسا رویہ اختیار کرنا کہ وہ دشمنی پر مجبور کردئے،تو اسکا کیا  ہی کیا جاسکتا ہے۔حقیقت یہی ہے کہ جب   توا  برداشت سے زیادہ گرم ہوجائے  تو  بلی بھی اپنے بچوں کے اوپر کھڑی ہوجاتی ہے۔

اس دن صبح سے بادل فضاء میں تیر رہے تھے ، اور لوگ موسم کی خنکی  سے بچنے کیلئے دھوپ  سینک رہے تھے ۔بچے اپنے

Abbottabad-Pakistan

ماؤں کے قریب ہی مٹی کے گھروندے بنا کر  کھیل رہے تھےکہ اسی اثناء میں  پاک  کے ناپاکوں نے  ہوا  میں  اُڑان بھری  تو  نیچے وطن  کےوفاداروں کے چھوٹےچھوٹے  گھرونچے نظر آنے لگے۔

پھر کیا ہوتا ہے کہ اُڑان کٹولے  میں بیٹھے ناپاک قاتلوں نے ایک دوسرے سے مکا ملا یا اور بٹن دبایا۔بٹن دباتے ہی   معصوم بچوں پر تاک تاک کر  باردود  برسا دیا جاتا ہے ، اور اسکے ساتھ ہی مٹی میں کھیلتے ہوئے بچوں کی چیخیں بلند ہوتی ہیں ،اور انکو اس بات کا یقین ہو ہی جاتا ہے کہ  دنیا کی قیمت بھی مٹی سے کچھ زیادہ نہیں ہے۔

معصوم بچوں کے ٹکڑے ٹکڑے بدن ،ساتھ ہی انکی مائیں جب انکی طرف لپکتی ہیں تو انکو بھی نہیں بخشا جاتا اور اس دنیا سے  انکا  ناطہ بارود برسا کر توڑ دیا جاتا ہے۔اور یہ معصوم بچے  اپنی ماؤں کے  گولیوں سے چھلنی چھلنی گود میں آرام پا لیتے ہیں۔

اسکے ساتھ ہی دوسرے گاؤں  کا نمبر آتا ہے ،وہاں بھی بارود کی بارش کی جاتی ہے، گولیاں برس رہی ہیں اور وطن کے (بہادر ناپاکی) ناپاک قہقہہ بلند کرتے ہیں اور نیچے  پھول جیسے بچوں کی تڑپتی لاشوں کا نظارہ کرتے ہیں، اور انکے موت پر واویلا کرنے والی ماؤں بہنوں کو بھی ان بچوں کے پاس عالم  برزخ میں پہنچا دیا جاتا ہے۔

فضاء میں پھڑپھڑاتے  اُڑان کٹولے میں بیٹھے ناپاک  آپس میں خوشی سے مکا ملاتے ہیں اور پھر تیسرے گاؤں کی ۔   ۔  ۔

کہتے ہیں کہ  ناپاک جس وقت پاک کے ساتھ خلط ملط ہوجائے تو اس وقت پاک جیسا خطرناک دشمن کوئی بھی نہیں ہوتا۔یہ وہ سانپ بن جاتا ہے جو کہ آپکے آستین میں رہ کر آپکو ڈستا ہے،اور اسی لئے شائد منافق کی سزا  کھلے عام کفر کا اعلان کرنے والے سے زیادہ ہے ۔

خبر یہاں ملاحظہ کیجئے

(پاکوں ) کی کاروائیاں جاری ہیں ۔

ابھی بھی شدید گولہ باری اور توپ کے گولے فائر کرنے کی آوازئیں آرہی ہیں۔متاثرین باڑہ  کو پاکوں کی جانب سے انکے اہل و عیال کے بہیمانہ قتل عام پر احتجاج سے روکا گیا۔پہلے تو گورنر نے انکو ٹرخانے کی کوشش کی ،ناکامی پر رات کے بارہ بجے ان پر لاٹھی چارج کیا گیا اور انکے رشتہ داروں کی لاشیں ٹرکوں میں ڈالوا کر مردہ خانے بھجوا دی گئی،پھر صبح (پاکوں )کی نگرانی میں زبردستی انکو دفن کرایا گیا۔

اس ظلم و ستم پر احتجاج کیلئے آنے والوں پر پشاور کے دروازے بند کئے گئے،بسوں اور مسافر گاڑیوں سے انکو اتار کر تھانوں میں بند کیا گیا۔ اس کا نتیجہ یہ نکلا کہ ٹرائیبل سٹوڈنٹس نے احتجاج کی کال دےدی اور طلباءمظاہروں کیلئے نکل پڑے۔رنگ روڈ پر گودام کے قریب پولیس چوکی کو لاتیں مار مار کر مسمار کیا گیا۔

اور اب رات کی تاریکی میں ان پر آگ و بارود کی برسات شروع کی گئی ہے اور توپ کے گولے ( باڑہ جس کو درحقیقت انڈیا سمجھ بیٹھے ہیں)  پر برسائے جا رہے ہیں اور مظلوم عوام کو فتح کرنی کی کوشش کی جا رہی ہے۔

ظلم و بربریت کرکے شائد ہی کسی معاشرے کو سدھارا جائے،مشرقی پاکستان کا انجام سب کو یاد ہے اور اسکی (پاک) وجوہات کا بھی سب کو علم ہے۔لیکن ہم وہی تاریخ دھرانے کی بھرپور کوشش میں ہیں،کیونکہ ان بلڈی سویلین سے تو کچھ بنتا ہی نہیں،جیسے پاکستان انکے باپ نے بنایا ہے،بلڈی سویلین کے ٹکڑوں پر پلنے والے کہیں کے۔ ۔ ۔

About Mansoor Mukarram

منصور مکرم(المعروف درویش خُراسانی) ایک اردو بلاگر ہے۔2011 سے اردو بلاگنگ کرتا ہے۔آجکل بیاضِ منصور کے عنوان کے تحت لکھتا ہے۔

Posted on January 18, 2013, in درویش کے قلم سے, سیاست and tagged , , , , , , , , , , , , , , , , , , , . Bookmark the permalink. 12 Comments.

  1. السلام علیکم
    باڑہ کے غم نے درد سیریا سے مل کے بڑا بے چین کیا

    خراسانی بھا ئ بالکل ٹھیک کہا آپ نے، ہر طرف فساد کی جڑ یہ آرمی ہی نظر آتی ہے، چاہے پاکستان کا کوئ شہر ہو یا شام کا-
    دنیا میں مسلمانوں پر ظلم بڑھتا جا رہا ہے، اور لوگ بڑھ کر اسکو روکنے کی بجائے خاموشی سے اپنی باری کے انتظار میں ہیں جیسے-
    مگر اللہ تو ظالم کی رسی ایک حد تک ہی دراز کرتا ہے، ان شاءاللہ ان سب ظالموں کی کشتی خوب بھر کر ڈوبے گی عنقریب۔ مظلوموں کی آہیں جمع ہو رہی ہیں جو کبھی رائگاں نہیں جاتیں-

  2. پتا نہیں کیوں ایک بہت بڑی اکثریت پاکستانی مسلح افواج کا اصل چہرہ دیکھنے سے قاصر ہے اور یہ سمجھنے سے قاصر ہے کہ کس طرح پاکستانی آرمی اس جنگ سے اپے لیے فائدہ اٹھا رہی ہے۔

  3. افسوس کہ۔۔۔۔۔۔۔۔ان صدیوں سے پیسے جانے والوں کو
    غیور ، بہادر ، دیندار وغیرہ وغیرہ کا شربت پلا کر مد ہوش رکھا جاتا ہے۔اور ہر دور میں ان کے ساتھ جانوروں جیسا سلوک کیا جتا ہے۔
    پھر بھی یہ سادہ لوح اپنوں اور غیروں سے دھوکا کھا کر مارے جاتے ہیں۔

    • شاہو صاحب بلاگ پر خوش آمدید
      خبر پر نظر ڈالتے ہی اندازہ ہو جاتا ہے کہ کس قسم کا پروپیگنڈا پر مبنی خبر ہے۔
      میرعلی میں جن بچوں کو دہشت گرد کہہ کر پکارا جاتا ہے ،اسکی تصدیق دیگر خبر رساں اداروں نے خوب ہی کی ہے ،کہ ان دہشت گردوں کی عمریں 10 -12 سال کے آس پاس تھیں۔

      رہی باڑہ کی خبر تو اسکے دہشت گردوں کی لاشوں کو گورنر ہاوس لایا گیا تھا اور انکے لواحقین نے انکے دہشت گردی کے نام پر بھیمانہ قتل پر شدید احتجاج ریکارڈ کرایا ہے۔

  4. جی بلکل ہماری فوج سامراج کی لےپالک ہے، کہیں جرمنی یا جاپان سے فوجی آئے ہوئے ہیں، اور انکے سینے میں پتھرہیں، میں تو کہتا ہوں کے ہماری فوج کو ختم ہی کردینا چاہئے، جس طرح جاپان سے فوج کو ختم کردیا گیا اور اٹلی اور جرمنی سے، تو کیا ہوں ادھر امریکن فوج تو بیٹھی ہوئی ہے، ہر سال اٹلی میں 20000 اٹالین لڑکیاں امریکن فوجیوں کی حاملہ ہوتی ہیں، اور اٹلی کی حکومت ادھر پھر بھی پےمنٹ کرتی ہے، کیا ہوا ہمارے ادھر بھی ایسا ہوتو، فوج تو ہوگی، اپنی نہیں تو کسی اور کی، یہ تو ساریخ کے لکھاری کا فیصلہ ہے۔ ہاں جن علاقوں میں فوج نہیں موجود اگر ادھر بندے نہیں مررہے تو بتاؤ، کرانچی اور بلوجستان وغیرہ، پھر اگر سرجن وڈا آپریشن کرے گا تو لہو تو بہے گا اور درد بھی ہوئیں گا اور کمزوری بھی آوے گی، پھر وٹامن کا شربت اور فروٹ جوس بھی پنیا پڑے گا، تو کیوں نہ ہم سرجن کو برا بھلا کہنے کی بجائے اپنی وہ عادات تبدیل کرنے کی کوشش کریں جو ہمین اس خونی بواسیر جیسے مرض میں مبتلا کرتے کا باعث بنی ہوئیں۔ وللہ اعلم اکثر میں غلط سوچتا ہوں، اس بار بھی لگتا ہے جذبات میں غلط ہی لکھ گیا، معذرت ایک دم۔

    • راجہ صاحب بلاگ پر خوش آمدید
      بدن کا کوئی عضو بیمار ہو تو فورا ہی انسان اسکو کاٹنے کی کوشش نہیں کرتا،بلکہ پہلے اسکی اصلاح کی کوشش کرتا ہے۔لیکن اگر کاٹنا ناگزیر ہو تو پھر کاٹا بھی جاتا ہے۔

      اٹلی اور جاپان کی فوج کا نہ ہونا انکی مجبوری ہے کیونکہ وہ امریکہ کی سرپرستی میں چل رہی ہیں اور یہ ایک معاہدے کی بناء پر ہے۔

      لیکن پاکستان کی اپنی فوج ہے اور پاکستان کی دفاع کا کام کرسکتی ہے،اور عوام ہی انکی جانی و مالی مدد کرتے ہیں۔گویا عوام کی چوکیدار ہے یہ فوج نا کہ عوام کے اوپر مسلط شدہ۔

      گھر کا کتا اپنے ہی مالک کو کاٹنے لگے تو اس کتے کا انجام سب کو معلوم ہے۔

      کاش یہ اپریشنیں علاج کے طور پر ہوتے تو۔۔۔
      لیکن یہاں تو حالت اُلٹی ہے ،اپریشن ہوتا ہی صرف ڈالر بٹورنے کیلئے ہیں، نہیں تو ہر اپریشن کے نام اور ڈرون حملوں کے نام پر وصول کئے جانے والے ڈالروں کو نیٹ پ سرچ کیا جائے۔

      طبیب بِک چکا ہے،پیسوں کی خاطر قوم کے گردے نکال بیچ رہا ہے۔اب ایسے طبیب کو نکالنا نا ہی صحیح لیکن قانون کے دائرے میں تو اسکو لانا چاہئے۔

  5. “ان بلڈی سویلین سے تو کچھ بنتا ہی نہیں،جیسے پاکستان انکے باپ نے بنایا ہے،بلڈی سویلین کے ٹکڑوں پر پلنے والے کہیں کے” سر جی یہ فقرہ تو دل ہی لے گیا۔۔۔ ویسے اتنی زبردست تحریر لکھنے پر ایک پُرخلوص سا شکریہ قبول فرمائیں۔۔

  6. السلام علیکم
    خراسانی بھائ میں نے ابھی دیکھا جو اردو محفل میں لوگوں نے اپکی اس پوسٹ پر ری ایکشن دیا ہے- اف ایسا لگتا ہے کہ ایک سائبر جنگ چھڑ گئ ہو جیسے طالبان اور فوج کی 🙂 مجھے امام انور العولقیؒ کا یہ مضمون یاد آ گیا پھر سے- معزرت انگلش پوسٹ کر رہی ہوں –

    Fighting Against Government Armies in the Muslim World

    July 14, 2009 – الثلاثاء 23 رجب 1430 by Anwar alAwlaki
    Filed under Imam Anwar’s Blog

    307 Comments

    Any army in the world exists with the sole purpose of defending the people from their enemies. But the armies of the Muslim world exist with the sole purpose of defending the interests of the enemies from the Muslims!
    This is one of the most ironical situations in our history!
    These armies serve two purposes: Defending the King or President along with their associates and secondly, defending the interests of the enemies of the ummah, the Zionists and Crusaders.
    These armies are blocking each and every attempt to re-establish Khilafah and Islamic law. They stand against those who want to establish Islam through Jihad and they even stand in front of those who seek to reach government through peaceful means as what happened in Algeria in the past.
    In other words, there can be no Islam with the presence of these armies. The Islamic rule states that whatever is needed to establish an obligation becomes an obligation. Establishing Islamic sharia is an obligation, and fighting in the cause of Allah is an obligation, and if that cannot be achieved except by fighting against these armies then that becomes an obligation.
    These armies are the defenders of apostasy in the Muslim world. They fight against Sharia and kill the Muslims who attempt to bring it back. They are fighting on behalf of America against the mujahideen in Pakistan, Somalia and the Maghrib.
    If this is the case with these armies how could anyone place the blame on the ones who fight them, accusing them of fighting against Muslims?! What kind of twisted fiqh is this? The blame should be placed on the soldier who is willing to follow orders whether the order is to kill Muslims as in Swat, bomb Masjids as with the Red Masjid, or kill women and children as they do in Somalia, just for the sake of a miser salary. This soldier is a heartless beast, bent on evil, who sells his religion for a few dollars. These armies are the number one enemy of the ummah. They are the worst of creation. Blessed are those who fight against them and blessed are those shuhada who are killed by them.

  1. Pingback: پائلٹ کا جواب « Darvesh Khurasani's blog

  2. Pingback: باڑہ احتجاج « جریدہ

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: