گستاخ رسول کی سزا اور اعتراضات کے جوابات

   بسم اللہ الرحمٰن الرحیم
   

نحمدہ و نصلی علیٰ رسولہ الکریم………. اما بعد  :

         گستاخ رسول کی سزا  ایک ایسا  امر ہے کہ جس کے ثبوت کے لئے قرآن و حدیث میں بے شمار دلائل موجود ہیں۔ اور اگر ان دلائل کو ایک انسان مدنظر رکھے تو  وہ کبھی بھی اس مسئلے کے بارے میں غلط فہمی کا شکار نہیں ہوگا۔ لیکن چونکہ  کم علمی کے سبب بعض لوگوں کے ذہن میں بعض اشکالات اور اعتراضات پیدا ہوجاتے ہیں ،   جس کےسبب وہ اس عالمی اور مشہور مسئلے میں تردد کا شکار ہوجاتے ہیں۔ اور اس سلسلے میں بروقت مناسب رہنمائی نہ ہونے سے کبھی کبھی  اس سلسلے میں بعض اوقات مخالفت  پر بھی اُ تر آتے ہیں۔

لھذا میں نے مناسب جانا کہ  اول تو اس مسئلے کو  دلائل سے ثابت کروں اور اسکے بعدقرآن وحدیث کی روشنی میں ان اعتراضات کا  بےغبار جواب کروں تاکہ اس کے بعداس سلسلے میں کسی کا کوئی اشکال اور اعتراض باقی نہ رہے۔قارئین کی آسانی کیلئے میں نے اسکو درج ذیل کے عنوانات میں تقسیم کیا ہے ۔تاکہ ہر بات آسانی سے سمجھی جاسکے۔نیز پڑھنے میں دشواری نہ ہو۔

اللہ جل شانہ  میری اس سعی کو قبول فرما کر  میری سعادت کا ذریعہ بنا دے۔آمین۔

٭٭٭۔۔اہانت رسول کی سزا قرآن میں

٭٭٭۔۔ اہانت رسول کی سزا  احادیث میں

٭٭٭۔۔ اگر کوئی قانون  ہاتھ میں لے کر اپنےطور پر گستاخ  رسول کو قتل کرے تو  اسکا کیا حکم ہے۔

٭٭٭۔۔ گستاخ رسول کا توبہ کرنا اور معافی طلب کرنا۔

٭٭٭۔۔ اعتراضات اور انکے جوابات

شاتم رسول کی سزا  اسلام میں  متنازع فیہ مسئلہ نہیں ہے۔تاریخ اسلام کے کسی دور میں اسکے بارے میں کوئی اختلاف نہیں پایا گیا۔

لیکن دور جدید میں  بعض اہل قلم مغربی نظریات سے  اسی طرح متاثر ہوے   کہ انہوں نے  اپنے ہی عقیدےاور   اسلام کے بنیادی  احکام میں بےجا  مداخلت شروع کی ،اور غیر ضروری بحثوں میں پڑ کر    امت میں تفرقہ پیدا کرنے کی کوشش شروع کردی ۔ مغربی نظریہ   کے نزد آزادی فکر   ”خیر اعلیٰ”   کی حیثیت رکھتی ہے  اور ہر شخص کو حق ہے کہ  وہ جو چاہے کہے اور لکھے ،   اس پر کوئی پابندی نہیں ہونی چاہیے۔

اسی مغربی نظریے کے اپنانے کا یہ نقصان ہوا کہ  ایک ایسے مسئلے سے اختلاف کیا گیا ، جس پر ہمیشہ عالم اسلام متفق اور متحد رہا۔

چنانچہ ملعون سلمان رشدی   کے کتاب کے وقت بھی  بعض لوگوں نے مسلمانوں کے احتجاج کو ایک مجنونانہ حرکت قرار دیا تھا۔ اور یہی حال اب بھی ہے کہ بعض لوگ  توہین رسالت بل کے درپے ہیں اور  اغیار کے آلہ کار  بن کر    ناموس رسالت کی گستاخی  کے مرتکب ہوتے ہیں۔

پاکستان کے ائین کے مطابق  ناموس رسالت کی توہین کرنے والے کی سزا صرف اورصرف موت ہے۔ اور یہ سزا  عین شریعت خدا وندی اور  اسلام کے مطابق ہے۔نیز  گستاخ رسول کا قتل ہی عشق اور محبت رسول کی دلیل ہے۔  اور اللہ تعالیٰ اور اسکے رسول  کی محبت سےعاری ہونا اہل فسق کا شعار ہے۔اور مؤمنوں کا شعار تو یہ ہے کہ وہ  اللہ تعالیٰ سے شدیدمحبت کرنے والے ہونگے۔ چنانچہ  قران مجید میں ہے کہ

والذین امنوا اشد حبا للہ (البقرہ۔۱۶۵)

اور ایک حدیث کے مطابق ایمان کی حلاوت بھی وہی شخص پائے گا  جسکے نزد اللہ اور اسکے رسول کی محبت  ساری محبتوں پر غالب ہو۔

شاتم رسول صل اللہ علیہ وسلم کیلئے سزائے موت  کی مخالفت اور  اہانت رسول صل اللہ علیہ وسلم  پر احتجاج کو خلاف اسلام قرار دینا  دراصل مزاج اسلام سے ناواقفیت کی دلیل ہے۔اور اجماع امت کی مخالفت ہے۔ گذشتہ چودہ سو سال سے یہ مسئلہ متفق علیہ رہا ہے۔ اور کسی نے بھی شاتم رسول کی سزائے موت کا  انکار نہیں کیا ہے۔

٭٭٭  گستاخ رسول کی سزا  کے قرانی آیات سے دلائل

ذیل میں  ہم قرآن مجید سے  گستاخ رسول کی سزائے موت کے دلائل کو ذکر کرتے ہیں:

(۱)

ا نَّ الَّذِينَ يُؤْذُونَ اللَّهَ وَرَسُولَهُ لَعَنَهُمُ اللَّهُ فِي الدُّنْيَا وَالْآَخِرَةِ وَأَعَدَّ لَهُمْ عَذَابًا مُهِينًا

(سورۃ احزاب ۔ایت۵۷)

ترجمہ:  بے شک جو لوگ اللہ تعالیٰ  اور اسکے رسول  صل اللہ علیہ وسلم  کو ایذاء  دیتے ہیں ، اللہ ان پر دنیا اور اخرت میں لعنت کرتا ہے۔اور انکے لئے ذلیل کرنے والا عذاب تیار کر رکھا ہے۔

اذیت  جسمانی بھی   اور   روحانی بھی ،  ذہنی بھی اور عقلی بھی، ان سب صورتوں میں  جو شخص اللہ اور اسکے رسول  کو کوئی بھی اذیت دے تو  وہ  دین  و  دنیا  میں رحمت سے دور  ہوتا ہے۔اب ہر آدمی کو سوچ لینا چاہیے کہ دو انچ کی زبان کہاں تک آدمی کا خانہ خراب کرتی ہے۔

(۲)

وما کان لکم ان تؤذوا رسول اللہ  (احزاب ،۵۸)

ترجمہ: اور تم کو جائز نہیں کہ رسول اللہ کو اذیت دو۔

(۳)

 قُلْ أَبِاللَّهِ وَآَيَاتِهِ وَرَسُولِهِ كُنْتُمْ تَسْتَهْزِئُونَ ۔لَا تَعْتَذِرُوا قَدْ كَفَرْتُمْ بَعْدَ إِيمَانِكُمْ 

  (التوبہ۔۶۵،۶۶)

ترجمہ: آپ کہہ دیجیے  کہ کیا  اللہ  کے ساتھ اور اسکی ایتوں کے ساتھ اور اسکے رسول کے ساتھ تم ہنسی کرتے تھے۔تم اب عذر مت کرو،تم اپنے کو مؤمن کہہ کر کفر کرنے لگے۔

(۴)

ومن یشاقق اللہ ورسولہ فان اللہ شدید العقاب (الانفال۔۱۳)

ترجمہ:  اور جو اللہ اور اسکے رسول کی مخالفت کرتا ہے،سو  اللہ تعالیٰ سخت سزا دینے والے ہیں۔

(۵)

ومن یشاقق الرسول من بعد ما تبین لہ الھدٰی و یتبع  غیر سبیل المؤمنین نولہ ما تولیٰ و نصلہ جھنم و سائت مصیرا(النساء۔۱۱۵)

ترجمہ:  اور جو شخص رسول صل اللہ علیہ وسلم  کی مخالفت کرے گا  بعد اسکے  کہ اسکے سامنے امر حق ظاہر ہو چکا  ہو اور مسلمانوں کا  راستہ  چھوڑ کر دوسرے رستہ ہو لیا  ہو تو ہم اسکو جو کچھ وہ کرتا ہے  کرنے دینگے  اور اسکو جھنم میں داخل کریں گے اور وہ بری جگہ ہے جانے کی۔

امید ہے کہ سب حضرات  اس پر غور کریں گے کہ اللہ تعالیٰ اور اسکے رسول کی اذیت  اور انکی مخالفت اور  انکا  مقابلہ  کس قدر سنگین  جرم ہے۔ جس پر اللہ تعالی کے شدید عذاب سے کون اور کس طرح بچ سکتا ہے۔

پھر مخالفت بھی معمولی نہیں بلکہ اعلانات  اور  اشتہارات  اور  اپنی انتہائی  کوشش  سے،  تو غور کر لیا جائے  کہ اس شدید ترین کوشش پر شدید عقاب وعذاب  دنیا اوراخرت میں کیا کیا ہوگا۔

ایسے مجرم کی حمایت اور حفاظت  نیز اسکی معاونت کرنا کسی انسانیت دشمن ہی کا کام ہوسکتا ہے۔

اللہ تعالیٰ قرآن مجید میں فرماتا ہے کہ

یاایہاالنبی جاھد الکفار والمنافقین واغلظ علیھم و ماوٰھم جھنم  وبئس المصیر(سورہ توبہ۔۷۳)

ترجمہ: ائے نبی !  کفار ومنافقین سے سے جھاد کرو اور ان پرسختی کرو  اور انکا ٹھکانہ جہنم ہے اور وہ برا  ٹھکانہ ہی  ہے۔

ان گستاخان رسالت میں بعض اسلام کے دعوی ٰ بھی کرتے ہیں ، لھذا منافق کے زمرے میں بھی آتے ہیں۔

٭٭٭۔۔ گستاخ رسول کی سزا     احادیث نبویہ سے دلائل

قرآن مجید کے ان ایات کے بعد ہم احادیث نبویہ سےدلائل پیش کرتے ہیں۔

(1)

قَالَ عَمْرٌو سَمِعْتُ جَابِرَ بْنَ عَبْدِ اللَّهِ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُمَايَقُولُ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ مَنْ لِكَعْبِ بْنِ الْأَشْرَفِ فَإِنَّهُ قَدْ آذَى اللَّهَ وَرَسُولَهُ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَقَالَ مُحَمَّدُ بْنُ مَسْلَمَةَ أَنَا فَأَتَاهُ فَقَالَ أَرَدْنَا أَنْ تُسْلِفَنَا وَسْقًا أَوْ وَسْقَيْنِ فَقَالَ ارْهَنُونِي نِسَاءَكُمْ قَالُوا كَيْفَ نَرْهَنُكَ نِسَاءَنَا وَأَنْتَ أَجْمَلُ الْعَرَبِ قَالَ فَارْهَنُونِي أَبْنَاءَكُمْ قَالُوا كَيْفَ نَرْهَنُ أَبْنَاءَنَا فَيُسَبُّ أَحَدُهُمْ فَيُقَالُ رُهِنَ بِوَسْقٍ أَوْ وَسْقَيْنِ هَذَا عَارٌ عَلَيْنَا وَلَكِنَّا نَرْهَنُكَ اللَّأْمَةَ قَالَ سُفْيَانُ يَعْنِي السِّلَاحَ فَوَعَدَهُ أَنْ يَأْتِيَهُ فَقَتَلُوهُ ثُمَّ أَتَوْا النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَأَخْبَرُوهُ

(بخاری،باب الرھن)

مختصرترجمہ:

حضرت عمروبن العاص روایت کرتے ہیں کہ میں نے جابر بن عبداللہ رضی اللہ تعالیٰ عنھما سے سنا کہ حضور صل اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ کون کھڑا ہوگا کعب بن اشرف کیلئے کیونکہ اس نے اللہ اور اسکے رسول کو تکلیفیں دی ہیں تو محمد بن مسلمہ اٹھ کھڑے ہوےاورپھر جا کر اسکو قتل کردیا۔اور پھر حضور صل اللہ علیہ وسلم کو اطلاع دی کہ میں نے اسکو قتل کردیا۔

اس حدیث کے ذیل میں فتح الباری نے لکھا ہے کہ یہاں اللہ اور اسکے رسول کو اذیت پہنچانے سے مراد یہ ہے کہ  اس نے اپنے اشعار کے ذریعے نبی پاک صل اللہ علیہ وسلم کو تکالیف دی تھیں اور مشرکوں کی مدد کی تھی۔حضرت عمرو سے روایت ہے کہ یہ کعب بن اشرف

نبی کریم صل اللہ علیہ وسلم کی ہجو  کرتا تھا اور قریش کومسلمانوں  کے خلاف ابھارتا تھا۔یہ یہودی نبی صل اللہ علیہ وسلم کو اور انکے واسطے سے اللہ کو اذیت دیتا تھا  تو نبی صل اللہ علیہ وسلم نے اسکے قتل کا اعلان کیا اور محمد بن مسلمہ نے اسکو قتل کرکے حضور صل اللہ علیہ وسلم کو اسکےقتل کی اطلاع دےدی۔

(۲)

بعث رسول اللہ صل اللہ علیہ وسلم الیٰ ابی رافع الیھودی رجالا من الانصاروامر علیھم عبد اللہ بن عتیق وکان ابو رافع یؤذی رسول اللہ صل اللہ علیہ وسلم و یعین علیہ ۔

(بخاری)

ترجمہ:

رسول اللہ صل اللہ علیہ وسلم نے ابو رافع یہودی کو قتل کرنے کیلئے چند انصار کا انتخاب فرمایا ،  جن کا امیر عبد اللہ بن عتیق  مقرر کیا ۔یہ ابو رافع نبی پاک صل اللہ علیہ وسلم کو تکالیف دیتا تھا اور آپ صل اللہ علیہ وسلم کے خلاف لوگوں کی مدد کرتا تھا۔

اس حدیث سے یہ معلوم ہوا کہ گستاخ رسول کے قتل کیلئے باقاعدہ  آدمی مقرر کئے جاسکتے ہیں اور نیز یہ بڑے اجر و ثواب کا کام ہے نہ کہ باعث سزا  و  ملامت۔کیونکہ یہ لوگ ایک بہت ہی بڑا کارنامہ اور دینی خدمت انجام دے رہے ہیں۔

(۳)

عن انس بن مالک  ان النبی صل اللہ علیہ وسلم دخل مکہ یوم الفتح و علی راسہ المغفر فلما نزعہ جاء رجل فقال ابن خطل متعلق باستار الکعبہ فقال اقتلہ۔

(بخاری)

قال ابن تیمیہ فی الصارم المسلول وانہ کان یقول الشعر یھجو بہ رسول اللہ ویامرجاریتہ ان تغنیابہ

فھذا لہ ثلاث جرائم مبیحۃ الدم، قتل النفس ، والردۃ ، الھجاء۔

(الصارم۔صفحہ ۱۳۵)

امر رسول اللہ صل اللہ علیہ وسلم بقتل القینتین(اسمھما قریبہ و قرتنا) 

(اصح السیر ۔صفحہ ۲۶۶)

ترجمہ:    حضرت انس سے روایت ہے کہ نبی صل اللہ علیہ وسلم جب فتح مکہ کے موقع پر مکہ مکرمہ میں داخل ہوئے  تو آپ صل اللہ علیہ وسلم نے سر مبارک پر خود پہنا ہوا تھا۔جب آپ نے خود  اتارا  تو ایک آدمی اس وقت حاضر ہوا   ور عرض کیا کہ ابن خطل کعبہ کے پردو ں کے ساتھ لٹکا ہوا ہے،آپ صل اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ اسکو قتل کردو۔(بخاری)

ابن تیمیہ نے الصارم المسلول میں لکھا ہے کہ ابن خطل اشعار کہہ کر رسول اللہ صل اللہ علیہ وسلم کی ہجو کرتا تھا اور اپنی باندی کو وہ اشعار گانے کیلئے کہا کرتا تھا،تو اسکے کُل تین جرم تھے جس کی وجہ سے وہ مباح الدم قرار پایا ، اول ارتداد دوسرا قتل اور تیسرا  حضور صل اللہ علیہ وسلم کی ان میں گستاخی۔

اور ابن خطل کے ان دونوں باندیوں کے قتل کانبی صل اللہ علیہ وسلم نےحکم دیا تھا۔

دراصل اشعار ابن خطل کے ہوتے تھے اور اسکو عوام کے سامنے گانے والی اسکی دو باندیاں تھیں۔

تو اس سے معلوم ہوا کہ گستاخی ناموس رسالت  کی اشاعت میں مدد کرنے والے کو بھی قتل کا جائے گا۔

(۴)

امر رسول اللہ صل اللہ علیہ وسلم بقتل الحویرث ابن نقیذ فی فتح مکہ  وکان ممن یؤذی رسول اللہ صل اللہ علیہ وسلم(البدایہ والنھایہ)        وقتلہ علی رضی اللہ عنہ  (اصح السیر)

فتح مکہ کے دن نبی پاک صل اللہ علیہ وسلم نے حویرث بن نقیذ کو قتل کرنے کا حکم دیا اور یہ ان لوگوں میں سے تھا جو نبی صل اللہ علیہ وسلم کو ایذاء پہنچایا کرتے تھے۔حضرت علی نے اسکو قتل کیا۔

(۵)

عن علی بن ابی طالب قال قال رسول اللہ صل اللہ علیہ وسلم من سب نبیا قتل و من سب اصحابہ جلد(الصارم المسلول صفحہ۹۲،۲۹۹)

ترجمہ:

حضرت علی سے روایت ہے کہ نبی صل اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ جو کسی نبی کو برا کہے اسے قتل کیا جاے اور جو صحابہ کو برا کہے اسکو کوڑے لگادئے جائیں۔

ان تمام دلائل سے یہ بات معلوم ہوتی ہے کہ ناموس رسالت کی گستاخی آدمی کو واجب القتل بنادیتی ہے اور اسکا  خون مباح ہوجاتا ہے۔اور یہ حکم حضرت آدم سے لے کر نبی پاک صل اللہ علیہ وسلم تک سب کو شامل ہے، یعنی آدم علیہ السلا م سے لے کر نبی صل اللہ علیہ وسلم تک جتنے بھی انبیاء ہیں،تو ان میں سے کسی ایک کی توہین سے بھی آدمی واجب القتل بن جاتا ہے۔

٭٭٭۔۔اگر کسی نے قانون ہاتھ میں لے کر اپنےطور پر اس گستاخ  رسول کو قتل کیا تو   !!!

ان دلائل کے بعد  جس میں گستاخ رسول کو قتل کرنے کا حکم ملتا ہے۔ اور خود نبی پاک صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم نے ایسے گستاخوں کو قتل کا حکم دیا ہے ۔ظاہر ہے اس وقت اسلامی حکومت تھی اور یہ کام اسلامی حاکم کے  حکم سےانجام پائے ہیں ۔لیکن اگر کسی نے انفرادی طور پر اُٹھ کر ایسے گستاخ کو قتل کردیا  تو اسکا  کیا حکم ہے۔آئیے    دیکھتے ہیں کہ نبوی زندگی میں اسکا کوئی مثال اگر ہےتو خود حضور صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم نے ایسےگستاخ کے قاتل کے ساتھ کیا  رویہ  اپنایا ہے۔

(۱)

حَدَّثَنَا ابْنُ عَبَّاسٍ اناعْمَى كَانَتْ لَهُ أُمُّ وَلَدٍ تَشْتُمُ  النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَتَقَعُ فِيهِ فَيَنْهَاهَا فَلَا تَنْتَهِي وَيَزْجُرُهَا فَلَا تَنْزَجِرُ قَالَ فَلَمَّا  كَانَتْ ذَاتَ لَيْلَةٍ جَعَلَتْ تَقَعُ فِي النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَتَشْتُمُهُ فَأَخَذَ الْمِغْوَلَ  فَوَضَعَهُ فِي بَطْنِهَا وَاتَّكَأَ عَلَيْهَا فَقَتَلَهَا فَوَقَعَ بَيْنَ رِجْلَيْهَا طِفْلٌ فَلَطَّخَتْ مَا هُنَاكَ بِالدَّمِ فَلَمَّا أَصْبَحَ ذُكِرَ ذَلِكَ لِرَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَجَمَعَ النَّاسَ فَقَالَ أَنْشُدُ اللَّهَ رَجُلًا فَعَلَ مَا فَعَلَ لِي عَلَيْهِ حَقٌّ إِلَّا قَامَ فَقَامَ الْأَعْمَى يَتَخَطَّى النَّاسَ وَهُوَ يَتَزَلْزَلُ حَتَّى قَعَدَ بَيْنَ يَدَيْ  النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَقَالَ يَا رَسُولَ اللَّهِ  أَنَا صَاحِبُهَا كَانَتْ تَشْتُمُكَ وَتَقَعُ فِيكَ فَأَنْهَاهَا  فَلَا تَنْتَهِي وَأَزْجُرُهَا فَلَا تَنْزَجِرُ وَلِي مِنْهَا ابْنَانِ  مِثْلُ اللُّؤْلُؤَتَيْنِ وَكَانَتْ بِي رَفِيقَةً فَلَمَّا كَانَ الْبَارِحَةَ جَعَلَتْ تَشْتُمُكَ وَتَقَعُ فِيكَ فَأَخَذْتُ الْمِغْوَلَ  فَوَضَعْتُهُ فِي بَطْنِهَا وَاتَّكَأْتُ عَلَيْهَا حَتَّى قَتَلْتُهَا فَقَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَلَا اشْهَدُوا أَنَّ دَمَهَا هَدَرٌ  

 (ابوداؤد، باب الحکم فی من سب)

ترجمہ:

حضرت ابن عباس  سے روایت ہے کہ ایک نابینا   کی ام ولد باندی تھی جو کہ نبی صل اللہ علیہ وسلم کو گالیاں  دیتی تھی اور آپ صل اللہ علیہ وسلم کے شان میں گستاخیاں کرتی تھی، یہ نابینا  اسکو  روکتا  تھا مگر وہ  نہ رکتی تھی ۔ یہ اسے ڈانٹتا تھا مگر وہ نہیں مانتی تھی۔راوی کہتا ہے کہ جب ایک رات پھر نبی صل اللہ علیہ وسلم  کی شان میں گستاخیاں کرنی اور گالیں دینی شروع کیں تو اس  نابینا نے ہتھیار(خنجر) لیا اور اسکے پیٹ پر رکھا اور اس پر  اپنا وزن ڈال کر دبا دیا  اور  مار ڈالا، عورت کی ٹانگوں کے  درمیان بچہ نکل پڑا،  جو کچھ وہاں تھا  خون الود  ہوا ۔

جب صبح ہوئی تو یہ واقعہ نبی پاک صل اللہ علیہ وسلم کے ہاں ذکر ہوا۔آپ نے لوگوں کو جمع کیا ، پھر فرمایا کہ اس آدمی کو اللہ کی قسم دیتا ہوں جس نے کیا  جو کچھ میرا  اس پر حق ہے کہ وہ کھڑا ہوجاے

تو نابینا  کھڑا ہوا،  لوگوں کو پھلانگتا ہوا  اس حالت میں آگے بڑا کہ  وہ کانپ رہا تھا،حتی کہ حضور صل اللہ علیہ وسلم کے سامنے بیٹھ گیا  اور عرض کیا کہ

 یا رسول اللہ میں ہوں اسے مارنے والا،  یہ آپ کو گالیاں دیتی تھی  اور گستاخیاں کرتی تھی  میں اسے روکتا تھا وہ  نہ  رکتی تھی ، میں دھمکاتا تھا  وہ  باز نہیں آتی تھی  اور اس سے میرے دو بچے ہیں جو موتیوں کی طرح  ہیں اور  وہ مجھ پر مہربان بھی تھی،لیکن آج رات جب اس نے آپکو گالیاں دینی  اور برا بھلا کہنا شروع کیا  تو میں نے خنجر لیا اور  اسکی پیٹ پر رکھا  اور زور لگا کر اسے مار ڈالا۔ نبی صل اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ لوگوں گواہ   رہو  اسکا  خون  بے بدلہ (بے سزا) ہے۔

(۲)

عَنْ عَلِيٍّ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ أَنَّ يَهُودِيَّةً كَانَتْ تَشْتُمُ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ  وَتَقَعُ فِيهِ فَخَنَقَهَا رَجُلٌ حَتَّى مَاتَتْ فَأَبْطَلَ  رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ دَمَهَا

(ابوداؤد، باب الحکم فی من سب)

ترجمہ:

حضرت علی سے روایت ہے کہ ایک یہودیہ عورت  نبی صل اللہ علیہ وسلم کو گالیاں دیتی تھی  اور برا کہتی تھی تو ایک  شخص نے اس کا  گلا گھونٹ دیا یہاں تک کہ وہ مر گئی  ،تو  رسول اللہ صل اللہ علیہ وسلم نے اسکے خون کو ناقابل  سزا قرار دے دیا۔

پہلا حدیث تو ایک مملوکہ باندی کا تھا اور دوسرا حدیث  غیر مملوکہ  غیر مسلم کا ہے، مگر غیرت ایمانی  نے کسی قسم کا  خیال کئے بغیر  جوش ایمانی میں جو کرنا تھا کردیا اور   حضور صل اللہ علیہ وسلم نے بھی اسکا بدلہ باطل قرار دیا ۔

دونوں واقعات سے معلوم ہوا کہ حضور صل اللہ علیہ وسلم  کو گالیاں دینے والے  مباح الدم بن جاتا ہے اور اگر کوئی اس گستاخ  کو انفرادی طور پر قتل کرے تو  قاتل کیلئے کوئی سزا نہیں ہے۔ بلکہ اس گستاخ  کا قاتل ہر قسم کے جرم و سزا سے آزاد ہوگا۔نیز حق کا علمبردار بن کر ثواب عظیم کا مستحق بن جاتا ہے۔

گستاخ رسول کے قتل حکومت کے ذمہ ہے۔ اور عام آدمی قانون  کو اپنے ہاتھ میں نہ لے ،لیکن اگر کسی نے قانون ہاتھ میں لے  کر اس گستاخ کو قتل کیا تو اس قاتل پر کوئی قصاص یا تاوان نہیں ہوگا کیونکہ مرتد مباح الدم ہوتا ہے اور جائز القتل ہوتا ہے۔ عام آدمی اگر اسکو قتل کردے تو  یہ آدمی مجرم نہیں ہوگا۔

٭٭٭۔۔  گستاخ رسول کا توبہ کرنا اور معافی طلب کرنا۔

مرتد اور گستاخ رسول کے توبہ کے بارے میں اکثر علماء کا مسلک یہ  ہے کہ صرف مرتد کی توبہ کو قبول کیا جاسکتا ہے ، لیکن وہ مرتد  جس نے اہانت رسول کی ہے تو اسکی توبہ قطعا قبول نہیں ۔ کیونکہ رسالت انبیاء کا حق ہے ، اور اپنے حق  کی معافی کا اختیار  بھی صرف ان انبیاء کے پاس تھا۔ انکے وفات کے بعد کسی کو  یہ حق حاصل نہیں کہ انبیاء کی توہین کرکے انکی عزت مجروح  کرنے والے  کی توبہ قبول کرلے۔

بعض علماء نے توبہ  کے بعد اسکےسزاے موت کو ٹالنے کا فیصلہ صادر کیا ہے۔ لیکن اس شرط پر کہ وہ توبہ حقیقی توبہ ہو  اور یہ  مرتد  دل سے توبہ کرے۔کیونکہ جرم اسکا بہت بڑا ہے لھذا  توبہ بھی اسی درجہ کی ہونی چاہیے۔

چونکہ قرانی ایات اور احادیث سے یہ بات ثابت ہوتی ہے کہ  یہ شخص اسلام سے نکل کر مرتد ہو اہے ،لھذا یہ آدمی  پہلے  اسلام کی تجدید کرے،اور علماء  اور عوام کے مجمع میں باقاعدہ  اپنے اسلام کی تجدید کرے۔ اور جس قدر اعلان اس کی گستاخی کا  ہوا ہے ، اسی قدر اعلان

اپنے تجدید اسلام  اور توبہ کا کرے۔

توبہ نام ہے تین چیزوں کی ۔۔۔

(۱) ۔۔۔۔گذشتہ گناہ پر انتہائی شرمندگی:۔

یعنی جو گناہ اس کیا ہے اور جو گستاخی اس نے کی ہے، اس سے رجوع اور توبہ کا کھلے عام اعلان کرے۔

نیز جن جن علاقوں تک اسکی گستاخی کی خبر پہنچی ہے تو وہاں تک یہ اپنے توبہ کی خبر بھی پہنچادے۔ اور کھلے عام رسائل ،اخبارات اور میڈیا کے سامنے  اپنے گناہ سے توبہ کرے۔ اور اپنے اس گناہ پر شدید  شرمندگی اور ندامت ظاہر کرے۔نیز لوگوں کے سامنے اپنی غلطی کا اقرار کرے۔ اور جو گستاخی اس نے کی ہے ،  اسکو بے دلیل اور بے ثبوت قرار دے کر  لوگوں کے سامنے  اسکا اقرار کردے۔

(۲)۔۔۔۔ نہایت عاجزی اور گریہ و زاری سے اللہ تعالیٰ سے معافی مانگے اور اپنے فعل پر حقیقی پیشمانی ظاہر کرئے۔

(۳)۔۔۔۔ آئندہ کیلئے ان گناہوں کے نہ کرنے کا پختہ عہد کرے۔بلکہ اپنے اس گناہ کی تلافی کیلئے ان  انبیاء مبارکہ  کے محاسن ،  بزرگی اور اعلیٰ مراتب کو  اسی عام ترین اعلان اور تقریر وتحریر کے ذریعے کرتے رہا کرے اور گذشتہ  کی غلطیاں طشت ازبام کرے۔تو  توبہ کی تکمیل ہوجاے۔

٭٭٭۔۔ چند غلط فہمیاں  اور انکا  ازالہ۔

(۱) اعتراض:

قرآن مجید میں پیغمبروں کے ساتھ استہزاء  کا جرم کاذکر بار بار آیا ہے  لیکن مجرم کیلئے سزائے موت  کا کہیں ذکر نہیں آیا ہے۔

جواب:

اصل گفتگو اسلامی شریعت کے دائرے  میں ہورہی ہے۔ اور احادیث کے نصوص سے قتل کی سزا ثابت ہے۔اور اگر صرف احادیث سے قتل کی سزا ثابت ہے تو کیا منکرین حدیث  کی طرح سے احادیث کا انکار کیا جاے گا۔ شراب نوشی کے حد کے بارے میں قرآن میں کہیں بھی ذکر نہیں  ہے بلکہ احادیث سے ثابت ہے ، تو  اعتراض کرنے والے اسکے بارے  میں کیا کہتے ہیں۔

…………………………………………………………………………………….

(۲) اعتراض:

رسول اللہ صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم دعوت و تبلیغ کیلئے  طائف گئے تھے اور وہاں کے لوگوں نے آپکو سخت تکلیف پہنچائی  تھی لیکن اسکے باوجود جب  فرشتہ ملک الجبال آپ کے پاس آیا  اور ان طائف والوں کی ہلاکت کی اجازت مانگی تو  نبی صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم نے اسکی اجازت نہیں دی۔

جواب:

یہ واقعہ مکی زندگی کے دوران ہوا  اور یہ اسلام کا ابتدائی دور تھا ، اور اس وقت تک شاتم رسول کے لئے سزا موت  کا حکم نہیں ملا تھا۔

نیز اس وقت تک شریعت محمدی نافظ نہیں ہوا تھا ۔لھذا طائف  والوں کو عذاب نہیں ملا۔ظاہر ہے اکثر احکامات ہجرت کے  بعد لاگو ہوے ہیں۔اور چونکہ انہوں نے نبی کی عزت کو مجروح کیا تھا ،  لھذا نبی پاک صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم نے ان لوگوں سے  حکمت کی بناء پر بدلہ لینا گورا نہیں کیا۔

……………………………………………………………………………..

(۳)اعتراض:

سہل بن عمرو ، عکرمہ بن ابوجھل اور عبد اللہ ابن ابی ابن سلول نے بھی آپ صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم کی شان میں گستاخیاں کی  تھی لیکن انکو کچھ نہیں کہا گیا ۔بلکہ عبد اللہ ابن ابی ابن سلول کا جنازہ بھی  حضور نے بذات خود پڑھایا، تو انکو کیوں قتل نہیں کیا گیا؟

جواب:

اس اعتراض کا جواب دینے سے پہلے ایک مشہور قاعدہ  بیان کرتا ہوں  اور وہ یہ ہے کہ  ایک آدمی نے  کسی دوسرے آدمی کو بے گناہ قتل کردیا۔ اب قاتل کیلئے سزائے موت ہے،  اور اسکا خون مباح ہے۔ قتل ثابت ہونے پر اسکو ضرور قتل کیا جائے گا۔ لیکن  مقتول  کےوارث کے پاس یہ حق ہے کہ وہ اس قاتل کو معاف کردے ،

اور  مقتول کے وارث کے معاف کرنے کے بعد اس قاتل کو سزائے موت دینا جائز نہیں ہے۔ لیکن یہ حق صرف مقتول کے وارث کے پاس ہے ، کسی اور کے پاس نہیں۔لھذا  اگر مقتول کے وارث موجود نہ ہوں تو کوئی  دوسرا   آدمی اس قاتل کے سزاے موت کو نہیں بدل سکتا۔

بالکل ایسے ہی چونکہ شاتم رسول نے نبی کی توہین کی ہوتی ہے  تو یہ گستاخ سزاے موت کا حقدار بن گیا ہے۔لیکن اگر نبی کسی حکمت کے سبب اس گستاخ کی  اس گستاخی کو معاف کردے تو ظاہر ہے کہ اس شاتم رسول کو سزاے موت نہیں ہوگی۔

اور جس طرح صرف مقتول کے وارث کے پاس قاتل کو معاف  کرنے کا حق ہوتا ہے۔بالکل ایسے ہی گستاخ رسول کو معافی کا حق صرف رسول کو ہی ہوتا ہے۔نبی کے علاوہ کسی کو بھی یہ حق حاصل  نہیں کہ وہ اہانت رسول کے مرتکب شخص کو معاف کردے۔

ظاہر ہے نبی کی عزت کو اس نے مجروح کیا ہوتا ہے تو معافی کا اختیار بھی صرف نبی کوحاصل  ہوگا۔

اور یہی امت مسلمہ کا معمول ہے کہ  نبی پاک صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم کے وفات کے بعد صحابہ کرام رضی اللہ تعالیٰ عنھم سے لے کر آج کے دور تک  امت کا اس مسئلے پر اجماع ہے کہ گستاخ رسول کو سزاے موت دی جاے گی۔ اور اسی قاعدے کی بنیاد پر  ان علماء کا فیصلہ ہے جو کہ گستاخ رسول کی سزاے موت کو توبہ کے بعد بھی بحال رکھتے ہیں۔

نیز نبی پاک صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم صاحب شریعت تھے اور  صاحب حکمت تھے۔ انکو معلوم تھا کہ کس کے قتل کرنے میں حکمت ہے  اور کس کے قتل نہ کرنے میں۔ لھذا  ابن خطل  اور  اور حویرث کے  سزاے موت کو نبی صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم نے بحال رکھااور سہل بن عمرو اور عکرمہ بن ابی جھل  کو معاف کیا۔اور بعد میں  یہ دونوں سچے دل سے اسلام لائے تھے۔

رہا یہ سوال کہ عبد اللہ ابن ابی ابن سلول  کا جنازہ نبی صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم  نے خود پڑھایا تھا ، تو   یہ بات درست ہے اور عبد اللہ ابن ابی ابن سلول کی منافقت کا علم  نبی صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم کو بھی ہوا تھا۔لیکن عبد اللہ ابن ابی ابن سلول مدینہ میں ایک قبیلہ  کا سردار تھا اور مدینہ میں اگر نبی صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم تشریف نہ لاتے تو اسکی سرداری یقینی تھی۔لیکن  نبی پاک صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم کی تشریف آوری  سے اسکو سرداری نہ مل سکی، اور حضور صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم اس کوشش میں ہوتے تھے کہ کسی طرح  عبد اللہ ابن ابی ابن سلول سچے  دل سے مسلمان ہوجاے،  اور منافقت کی چادر اتار پھینکے۔

اور اسکی گستاخیوں کو بھی صرف اسلئے معاف کیا کہ معافی کا اختیار نبی صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم کو حاصل تھا۔

نیز حضور صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم امت پر مہربان تھے اور چاہتے تھے کہ یہ لوگ جہنم کی آگ سے بچ جائیں ،لھذا اسی لئےنبی پاک صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم نے عبد اللہ ابن ابی ابن سلول کا جنازہ پڑھا۔

لیکن اس واقعے کے بعد اللہ تعالیٰ نے حضور صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم  کو منافقین کے جنازے پڑھنے سے منع کردیا۔اور یہ حکم نازل ہوا کہ  نہ تو ان منافقین کیلئے مغفرت کی دعاء کی جاے اور نہ ہی انکا جنازہ پڑھا جاے۔اور یہ حکم آج تک قائم ودائم ہے۔

…………………………………………………………………………………..

(۴) اعتراض:

نبی صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم تو امت کیلئے رحمت عالم بنا کر بھیجے  گئے تھے ۔نا کہ قاتل عالم۔لھذا گستاخ رسول کی سزاے موت درست نہیں ہے۔

جواب:

یہ درست ہے کہ نبی پاک صل اللہ علیہ و علی اٰلہ و صحبہ و سلم اس  دنیا کیلئے رحمت عالم بنا کر بھیجے گئے تھے۔لیکن یہ کہاں کا انصاف ہے

کہ مجرموں کو کچھ نہ کہا جاے اور  ان کو کھلے عام چھوڑدیا جاے۔ مجرموں کو پکڑ کر انکو انکے جرم کے مطابق سزا  دینا  ہی عین رحمت اور  انصاف ہے۔ورنہ تو قاتل اور چور قتل اور چوریاں کرتے ،اور قانون انکو کچھ نہ کہتی ، تو یہ تو انصاف نہیں بلکہ مجرموں کو  اپنے کئے کی سزا دینا ہی رحمت اور  انصاف ہے ۔ اور اسی لئے نبی کو رحمت عالم بنا کر بھیجا گیا تھا۔

قرآن مجید میں ہے کہ     (ولکم فی القصاص حیاۃ)

ترجمہ:۔۔  اورتمہارےلئے قصاص میں زندگی ہے۔

تو قصاص کو حیات اسلئے کہا گیا کہ اس سے کشت وخون کی بدامنی سے  انسانیت کو نجات ملتی ہے۔شاتم رسول  پیغمبر کے کردار کی قتل کی کوشش کرتا ہے ،  اور اس گستاخ  کا قتل ہی پیغمبرکے کردار کے قتل کا بدلہ ہے۔

آج اگر ایک ملک کی سفیر کی بے حرمتی ہوتی ہے تو پورے ملک کی  بے حرمتی سمجھی جاتی ہے۔ تو انبیاء بھی اللہ تعالیٰ کے سفیر ہیں ۔اور اللہ تعالیٰ   کے سفیر کی بے حرمتی عذاب الہی کو دعوت دیتی ہے  اور عذاب سے پورا علاقہ تباہ ہوتا ہے ، تو پورے علاقے کی تباہی کے بجاے کیوں نہ اس گستاخ کو ہی صفحہ ہستی سے مٹا دیا جائے۔

  1. Salam Alaikum darvesh bhai
    umeed hay khairiyat say hogy ap

    May nay aik sawal poochna that kiya serf gustakhi kay mamaly murtad mubah ad dam hoga yah yah hukam aam hay , matlab ager koi bhi murtad hojaye to riysat islami kay ilawa koi ferd khod usay qatal ker sakta hay

    • @Amir.
      Agar riasat khud shatim-e-Rasool ho (Governor bi riyasat ka hisa he) to mery khiyal me Ummat -e-Muslim me se kisi bi Musliman ko ye haq he ke wo hakoomat ke khilaaf bgawat krein. Phir to qanoon ko haath me lene ya na leny ka swal hi paida nhi hota.

  2. عامر بھائی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ و برکاتہ

    الحمدللہ میں خیریت سے ہوں ۔امید ہے کہ آپ بھی خیریت سے ہونگے۔کافی عرصہ بعد مل کر خوشی ہوئی۔

    میں دراصل کسی کورس کے سلسلے میں دوسرے شھر گیا ہوا تھا جہاں مجھے انٹر نیت کی سہولت میسر نہیں تھی لھذا تاخیر سے جواب دینے کیلئے معذرت۔

    جو سوال آپ نے اٹھایا ہے تو میرے خیال میں اگر آپ شھر کے کسی ماہر اور تجربہ رکھنے والے مفتی سے پوچھ لیں تو بہتر ہوگا ، کیونکہ میں اس بارے فی الحال کچھ نہیں کہہ سکتا کیونکہ یہ ایک اہم اور نازک معاملہ ہے۔

    بلکہ اگر ہوسکے تو جو جواب آپکو ملے ،اس سے مجھے بھی باخبر کردیں ، تاکہ مجھے بھی یہ مسئلہ معلوم ہوجائے ۔

  3. جزاک اللہ ، اگر مجھے جواب ملا تو آپ کو ضرور آگاہ کردوں گا

  4. السلام علیکم ورحمتہ اللہ
    بھیا آپکا بلاگ دیکھا، یہ صفحہ اور صفحۂِ اوّل پر قادیانیوں کی سازشوں کی آگاہی کے متعلق سائیڈ بار میں مواد دیکھ کر بہت خوشی ہوئی۔ اللہ آپکی اِس کاوش کو قبول فرمائے۔ اِسی آگاہی کی تشہیر کیلئے میں آپکے بلاگ کا ربط اپنے بلاگ میں شامل کر رہا ہوں۔

    • وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ و برکاتہ

      عادل بھیا سب سے پہلے تو میرے بلاگ کا ربط اپنی بلاگ پر دینے اور پسندیدگی کا شکریہ
      دعاء ہے کہ اللہ تعالیٰ اس معمولی محنت کو قبول کرلے تو بس یہ بھی بڑی سعادت ہے۔ان شاء اللہ آپ جیسے اچھے دوستوں کی دعاء ہوگی تو ایسے ہی لکھتے رہیں گے۔

  5. جناب گستاخی کا معاملہ پہلے آسان تھا اب وہ نہیں – آج دانشوارانہ انراز مین جواب دینا ہے- اگر عقل سے کام نہین کریں گے تو اسلام دشمن کہے گا کے مسلمان صرف جزباتی ہے – اسوقت اسلام اور مسلمان کے دشمن کچھ کم نہیں ہیں – وہ آپکو بہڑکانے کی کوشش کرتے ہیں – اور آپ احتیاط کے ساتہ جواب دیں ۔ شکریہ

  6. ماشاء اللہ بہت اچھا بلاگ ہے آپکا، بہت اچھی اچھی انفارمیشن ملی ہیں مجھے۔
    توہین رسالت ایک نہایت ہی نازک موضوع ہے۔ اسے ہر جگہ یا ہر فورم پر ڈسکس نہیں کیا جا سکتا۔ لیکن میں اس بات سے سو فیصد اتفاق کرتا ہوں کہ اگر کوئی توہین رسالت کا مرتکب ہو تو اسے قرار واقعی سزا ملنی چاہیئے اور اسکی سزا موت ہے۔

    ایک مسلمان جو کہ غیرت مند ہو اس کی والدہ یا والد کو گالی دی جائے تو وہ قتل و غارت پہ اتر آتا ہے اور اگر بات ہو سیدی الانبیاء کی اور بندہ اس میں تاویلیں ڈھونڈے تو میرا خیال ہے کہ اس جیسا بے غیرت انسان کہیں اور ہو ہی نہیں سکتا۔ ایسے انسان کو اپنے ایمان کی فکر کرنی چاہیئے۔

    Abu @

    جناب یہ معاملہ ہے ہی جذبات کا ہے۔ ہو سکتا ہے کہ اسلام دشمن ہمیں واقعی بھڑکانے کی کوشش کررہے ہوں لیکن کوئی ان کا آلہ کار کیوں بنے اگر اسے اس میں دلچسپی نہ ہو۔ کیا آپ انکے آلہ کار بن سکتے ہیں؟؟ لیکن میں سمجھتا ہوں کہ آپ نہیں بن سکتے اور نہ ہی کسی ہوشمند مسلمان سے ایسی توقع کی جا سکتی ہے۔ اس لئے جو بھی ایسا کام کرے گا چاہے اپنے لئے یا کسی کے غلیظ مقاصد کو پورا کرنے کیلئے تو اس پہ حد تو لگے گی۔

    • شکریہ محمد اطہر رضوی بھائی۔
      واقعی توہین رسالت کا معاملہ نہایت ہی نازک ہے۔یہ کالم بھی دراصل ایک ساتھی کی درخواست پر لکھا تھا۔اپنی بھرپور کوشش کی تھی کہ موضوع قران و حدیث سے باہر نہ نکلے ۔

  7. 25جون 2012کو سراے سدھو تحصیل کبیروالہ ضلع خانیوال میں مرزا قادیانی نے(نااعوذباالللہ) قرآن پاک کو پھاڑ کر بے حرمتی کی اور شہید کر دیا گیا ہے اس پہلے اسی گروہ نے 6ستمبر 2001 کو محسن انسانیت حضرت محمد صلی الللہ علیہ وآلہ وسلم کی شان گستاخی کی تھی ان مرزیائوں اور قادیانیوں کو کیفر کردار تک پنہچانے کیلۓ محمد بلال عرف بگو شہید نے بیڑا اٹھایا تھا لیکن 7دن بعد یعنی 13ستمبر2001 کومحمد بلال عرف بگو کو شہید کروا دیا گیا بلال شہید کے قاتلوں کو نہ پکڑا اور نہ ہی سزا دی گئ اس بعد بلال شہید کا بھائی غازی کشمیر غازی افغنستان .عابد حسین نے یہ ذمہ داری سنبھالی عابد حسین قانون دانوں کو کہتا رہا کہ گستاخ رسول کو پکڑو اور قانون کے مطابق سزا دو لیکن تھانوں اور عدالتوں نے نہ سزا دی نہ ہی پکڑا . آخر کار عابدحسین نے 17اکتوبر 2001مرزائیوں قادیانیوں کے گھر پرحملہ کر دیا جس میں ایک ملعون زخمی ھوگیا اس کے بعد اس وقت .ڈی .ایس.پی. مرزا قادیانی تھا اس نے عابدحسین کو پکڑنے کیلۓ دن رات ایک کردیا آخرکار 18جون 2002کو عابدحسین کو زندہ گرفتار کرلیا گیا 26جون2002عابدحسین کو شہید کردیا گیا. سراے سدھو کی سرزمین کے اوپر مقدس کتاب قرآن مجید کے اوراق مسلمان ادیبوں شاعروں مفکروں دانشوروں انجینروں ڈاکٹروں وکیلوں ججوں قانون دانوں معیست دانوں صنعت دانوں حرفت دانوں زراعت دانوں تاجرو غازیو آجرو فاجرو اور زندگی کے کسی بھی شعبے سے تعلق رکھتے ھو کیا تم لوگ میرا دفاع کرو گے شاتم رسول کا گھیرا تنگ کرو گے .اگر تم لوگ میرا اور میرے رسول حضرت محمد کا دفاع نہ کرو گے تو یاد رکھنا کہ پھر ایسی تحریک اٹھے گی تم سب کو بہا لے جاۓ گی .(پیغام قرآن کی پکار مسلم امہ کے نام)

    • (بسم الللہ الرحمن الرحیم) حضرت محمد صلی الللہ علیہ وآلہ وسلم کی ناموس اور صحابہ کی ناموس کیلۓ سب کچھ قربان.|عبدالللہ ..؟؟??.. محمد کی محبت دین حق کی شرط اول ہۓ. اسی میں ھو اگر خامی تو ایماں نامکمل ہۓ# محمد ہۓ متاع عالم ایجاد سے پیارا. پدر،مادر،برادر،جان،مال،اولاد سے پیارا# محمدکی غلامی ہۓ سند آزاد ہونے کی. خدا کے دامن توحید میں آباد ہونے کی# وہ داناۓ سبل،ختم الرسل،مولاۓ کل جس نے.غبار راہ کو بخشا فروغ وادئ سینا# نگاہ عشق و مستی میں وہی اول وہی آخر. وہی قرآں وہی فرقاں وہی یسین وہی طہ# اسلام علیکم!میرے غیور مسلمان بھائیو بہنو آج مسلم امہ کو بہت سے چیلنجوںکا سامنا ہۓ آج کا بھوکا کافر مسلمانوں کا دین مٹانا چاہتا ہے کبھی یہ ختم الرسل کی شان پر ڈاکہ مارتا کبھی یہ قرآن کے مقدس اوراق پرڈاکہ مارتا ہے کبھی یہ پورا قرآن جلا ڈالتا کبھی یہ ختم الرسل کے صحابہ کی ناموس پر ڈاکہ مارتا ہے کہ مسلمانوںکا یہ ورثہ ختم ہو جاۓ اور مسلمان ہماری غلامی آ جائیں. دنیا بھر کے مسلمانوں آج وقت ہے متحد ہو جائو کیونکہ آج مسلمان طاقت کافر کے مقابلے میں دس گناہ بھاری ہے مسلمانو متحد ھو کر میدان جہاد نکلو تو انشاالللہ یہ تمارا دشمن دم دبا کر بھاگ جاۓ گا. مسلمان دانشورو مفسرو ادیبو شاعرو قانوندانو وکیلو ججو صنعت دانو سیاست دانو معیشت دانو اساتزو طالب علمو مزدورو آجرو فاجرو تاجرو زمیندارو کسانو غازیو مجاھدو فوجیو سپاہو تھانیدارو اگر تم مسلمان ھو تو گستاخ رسول اور گستاخ قرآن سے لین دیین ختم کر دو اور گستاخ کافروں کی مصنوعات کا مکمل بائیکاٹ کرو اگر الللہ اور اس کے آخری رسول حضرت محمد صلی الللہ علیہ وسلم اور الللہ کی آخری کتاب قرآن مجید کو راضی کر لو تو یہ دنیا بھی سنور جاۓ گی اور آخرت بھی ہمیشہ ہمیشہ کیلۓ سنور جاۓ گی .اگر الللہ کو راضی نہ کرو گے تو پھر یاد رکھنا دنیا تو آخر گزر جاۓ گی آخرت میں کافروں کاگستاخوں شیطانوں منافقوں نافرمانوں کا کوئی مدد گار ان پر الللہ کی اس کے رسولوں کی اور نیک لوگوں کی لعنت ھوگی اور ان کو ہمیشہ ہمیشہ کیلۓ دوزخ میں بند کر دیا جاۓ اور وہ بہت جگہ ہے (بیاد محمد بلال عرف بگو شہید){بیاد عابد حسین شہید}

  8. ہو اگر عشق تو ہے کفر بھی مسلمانی
    نہ ہو تو مردِ مسلماں بھی کافر و زندیق
    (اقبال)

  9. خدا نے انسان کو عقل عطا کی ہے نہ کہ مذھب_
    یہ خدا پر جھوٹ اور بہتان ہے کہ اس نے نبی اور کتاب بھیجے ہیں_
    محمد کو اچھا شخص کہا نھیں جاسکتا، پیغمبری تو دور کی بات_ ویسے یہ رسالت چیز کیا ہوتی ہے_
    خدارا کچھ ہوش کرو _
    مزید معلومات کے لیۓ علی سینا کی کتابUn……….g‏”
    Muhammad”کا مطالعہ کریں…‏
    visit:
    fa……..om.org
    d…….m.com
    ans……..am.com

    • گویا آپ بھی چاہتے ہیں کہ آپکا انجام بھی کعب بن اشرف یہودی جیسا ہو۔۔۔؟؟؟

    • آپ جیسوں کو یہاں جوابات مل جائیں گے۔

      موڈریٹر: کھوکھر صاحب آپ کا فراہم کردہ لنک بلاگ کے اصولوں کے خلاف ہے،اسی لئے حذف کیا جا تا ہے۔بلاگ لوگوں کی راہنمائی کیلئے بنا ہے،گمراہی کیلئے نہیں۔شکریہ

    • Dear Moderator, in waqar sahib k comment ko delete kiun nahi kia gaya?

      • وقار صاحب کے تبصرے کو اسلئے ڈیلیٹ نہیں کیا گیا تاکہ لوگوں کو وقار جیسے لوگوں کی موجودگی اور ان سے بچاؤ کی فکر ہوسکے،نیز موڈریٹر پر ناپسند باتیں ڈیلیٹ کرنے کا الزام نہ لگ سکے ،باقی جو اس نے کوشش کی تھی لوگوں کی گمراہی کیلئے تو ان لنکس کو بے کار کردیاگیا ہے۔

  10. مکرمی، آپ کا نقطہ نظر قرآن کے برخلاف ہے۔ سنت اور قرآن میں کوئی اختلاف نہیں‌ہو سکتا- جو بھی دلیلیں‌ آپ نے قرآن سے لی ہیں وہ شاتم رسول پر پوری نہیں آتیں۔ اللہ تعالیٰ‌نے اھانت کرنے والے کا ذمہ خود لیا ہے۔ اس کے باوجود کوئی خود کو اللہ کے مقابل غیرت والا ثابت کرے تو وہ جانے اور اس کا خدا۔

    احادیث سے ثابت تو صرف کعب بن اشرف، ابو رافع اور ابن خطل کے قتل ہیں جو حربی اور حربیوں کے مددگار اور مسلمانوں کے قتل میں شریک تھے۔ دیگر احادیث موضوع اور مشکوک ہیں – خاص طور پر عورتوں کے قتل کی احادیث۔

    امام ابن تیمیہ کی کتاب میں بھی لکھا ہے کہ اس بات میں اختلاف پایا جاتا ہے۔ اور انہوں نے مودبانہ طور پر امام اعظم سے اختلاف کر کے اپنا نقطہ نظر پیش کیا۔ جنگ کے دور میں جب اسلام اور کفر میں تصادم کیوجہ سے مسلمان ہونا ایک قسم کا پاسپورٹ تھا اور مسلمانوں کواسلامی ممالک میں تحفظ مہیا تھے ایسے مسلمانوں سے ارتداد اور اہانت کے کلمات گویا بغاوت کے زمرہ میں آتے تھے۔ اور غیر مسلم ذمی بھی اہانت کرکے گویا بغاوت کے مرتکب ہوتے تھے۔ ان باتوں کا اطلاق صرف ان صورتوں میں ہو سکتا ہے جب ارتداد اور اہانت سے نقص امن کا اندیشہ ہو اور قوم میں فساد پیدا ہو۔

    کسی گلی محلہ میں جہلاء کی گالم گلوچ، انپڑھ لوگوں کی ہفوات، یا دینی-لادینی مباحث اس زمرہ میں نہیں آتے۔ ان کو سخت ناپسند کیا جانا چاہیے اور ایسی مجالس سے کنارہ کرنا لازم ہے۔ لیکن قتل کا حق کسی کو نہیں۔ یہ اللہ اور اسکی غیرت کا معاملہ ہے۔ انسان کو زبانبدی کا اختیار بھی نہیں۔ ہاں نقص امن کا اندیشہ ہو تو قید کر لیں یا ملک بدر کردیں۔

    • مکرمی، آپ کا نقطہ نظر قرآن کے برخلاف ہے۔ سنت اور قرآن میں کوئی اختلاف نہیں‌ہو سکتا- جو بھی دلیلیں‌ آپ نے قرآن سے لی ہیں وہ شاتم رسول پر پوری نہیں آتیں۔ اللہ تعالیٰ‌نے اھانت کرنے والے کا ذمہ خود لیا ہے۔ اس کے باوجود کوئی خود کو اللہ کے مقابل غیرت والا ثابت کرے تو وہ جانے اور اس کا خدا


      .

      جناب والا میں نے جو دلائل قران مجید سے دئے ہیں،اسمیں نبی (صل اللہ تعالیٰ علیہ والہ وصحبہ وسلم ) کو اذیت دینے والے کی شدید مذمت اور وعید بیان کیا گیا ہے۔
      اور میں نے اس سے کہیں بھی یہ حکم ثابت نہیں کیا ہے،کہ گستاخ رسول کو قتل کرو۔بلکہ ان آیات مبارکہ میں یہ بیان ہے کہ اللہ تعالیٰ کے نزد اہانت رسول کس قدر بڑا جرم ہے۔

      .
      .
      .
      .
      احادیث سے ثابت تو صرف کعب بن اشرف، ابو رافع اور ابن خطل کے قتل ہیں جو حربی اور حربیوں کے مددگار اور مسلمانوں کے قتل میں شریک تھے۔.
      .

      جناب والا حربی تو دیگر کفار بھی تھے،تو انکے قتل کیلئے نبی (صل اللہ تعالیٰ علیہ والہ وصحبہ وسلم ) نے اس قدر شدید قدامات کیوں نا کیے؟
      انکے قتل کی دوسری وجوہات کے ساتھ ساتھ ایک بڑی وجہ انکا شاتم رسول ہونا بھی تھا۔

      .
      .
      .
      .
      دیگر احادیث موضوع اور مشکوک ہیں – خاص طور پر عورتوں کے قتل کی احادیث۔
      .

      ہر کوئی بلا دلیل یہ دعویٰ کرسکتا ہے۔اور اگر بالفرض ،بالفر ض مان بھی لیا جائے کہ یہ احادیث صحیح نہیں تو بھی ہمارا مقصد پہلے کی تین احادیث سے پورا ہوگیا ہے،اور باقی احادیث انکی تاکید کیلئے ہیں۔
      .
      .
      .
      .
      امام ابن تیمیہ کی کتاب میں بھی لکھا ہے کہ اس بات میں اختلاف پایا جاتا ہے۔
      .

      امت مسلمہ کے جمہور علماء کی رائے میں شاتم رسول مرتد و واجب القتل ہے۔
      .
      .
      .
      .
      ان باتوں کا اطلاق صرف ان صورتوں میں ہو سکتا ہے جب ارتداد اور اہانت سے نقص امن کا اندیشہ ہو اور قوم میں فساد پیدا ہو۔
      .

      شاتم رسول کی قتل کیلئے کسی صورت کے اطلاق کی ضرورت نہیں ۔
      نیز اب بھی اہانت رسول کرنے والے نقص امن اور معاشرے میں فساد و بگاڑ پیدا کرنے کیلئے ہی یہ حرکات کرتے ہیں،ورنہ (اور بھی کام ہیں زمانے میں اہانت کے سوا)

      .
      .
      .
      .
      کسی گلی محلہ میں جہلاء کی گالم گلوچ، انپڑھ لوگوں کی ہفوات، یا دینی-لادینی مباحث اس زمرہ میں نہیں آتے۔
      .

      شرعیت کے احکام عاقل پر لاگو ہوتے ہیں۔پاگل شرعی احکامات سے مستثنیٰ ہے۔
      .
      .
      .
      .
      قتل کا حق کسی کو نہیں۔
      .

      یہ نعرہ آج کل کے دھریہ این جی اوز کا موقف ہے۔جبکہ خالق کائینات کا فیصلہ اسکے خلاف ہے۔
      .
      .
      .
      .
      یہ اللہ اور اسکی غیرت کا معاملہ ہے۔
      .

      ہاں واقعی یہ اللہ تعالیٰ کی غیرت کا معاملہ ہے ،کیونکہ رسول یا نبی بھی اللہ تعالیٰ کا ایک قاصد یا پیغام لانے والا ہوتا ہے،اور انسان اللہ تعالیٰ کا ہی خلیفہ ہے، اسی لئے جو بھی اللہ تعالیٰ کی غیرت کو للکارے تو خلیفہ اپنی طاقت کے موافق دشمن کو جواب دینے کا پابند ہے،اگر جواب نہ دیا تو اللہ تعالیٰ اس سے سخت باز پرس کرئے گا۔
      .
      .
      .
      .
      انسان کو زبان بندی کا اختیار بھی نہیں۔
      .

      آپکے جھوٹے مدعی نبوت مرزا قادیانی کی اہانت پر تو خوب واویلا ،بلکہ شدید دشمنی اور قتل و غارت جائز ، جبکہ سچے نبی و رسول کی اہانت پر قتل کا اختیار تو الگ بات زبان بندی بھی جائز نہیں۔
      خوب انصاف ہے۔۔۔

  11. سلام سر جی آپ کیسے ہیں۔ ما ء شا اللہ آپ نے بہت اچھا بلاگ بنا یا ہے۔

  12. یاالللہ مدد ختم زندہ باد میں نوکرصحابہ دا ہم نے دور میں تقدیس رسالت کیلۓ وقت کی تیز ہواؤں سے بغاوت کی ہے توڑ کر سلسلہ رسم وسیاست فسوں فقط اک نام محمد سے محبت کی ہے.# ہمدم کو بچھڑنا ہے وفا جیسی بھی ہو ،گلش کو بکھرنا ہے فضاء جیسی بھی ہو ، کیا حسن جوانی بے سود ہیں باتیں ، قبروں میں اترنا ہے قبا جیسی بھی ہو. منجانب . غلبہ اسلام تحریک تحفظ پاکستان

  13. یاالللہ مدد ختم زندہ باد میں نوکرصحابہ دا ہم نے دور میں تقدیس رسالت کیلۓ وقت کی تیز ہواؤں سے بغاوت کی ہے توڑ کر سلسلہ رسم وسیاست فسوں فقط اک نام محمد سے محبت کی ہے.# ہمدم کو بچھڑنا ہے وفا جیسی بھی ہو ،گلش کو بکھرنا ہے فضاء جیسی بھی ہو ، کیا حسن جوانی بے سود ہیں باتیں ، قبروں میں اترنا ہے قبا جیسی بھی ہو. منجانب . غلبہ اسلام تحریک تحفظ پاکستان سراے سدھو خانیوال 03467064937

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: